All Golpo Are Fake And Dream Of Writer, Do Not Try It In Your Life

قانون اور بہن اردو جنسی کہانی میں دیسی سیکسی بہن

۔اس کہانی میں سارےنام فرضی ہیں۔ کیونکہیہ کہانی بالکل حقیقتہے۔میری شادی کو دوسال ہوئے تھے اورمیرا ایک خوبصورت سابیٹا تھا، ایک بارمیری بیوی نے فرمائشکی کہ پکنک پرچلتے ہیں سمندر کےکنارے میں نے حامیبھر لی کافی دنسے باہر کا کوئیپروگرام نہیں بنا تھااس لیے اور میریدو دن کی چھٹیآرہی تھی۔ میری بیوینے کہا ہم لوگجیا کو بھی ساتھلے کر چلینگے جیامیری اکلوتی سالی ہےمیرے سسر کے دوہی بچے تھے ایکمیری بیوی اور ایکمیری سالی۔ میری سالیکی عمر بیس سالہے اور وہ خوبصورتتو ہے ہی مگرسیکسی بھی بہت ہےاچھے اچھوں کا ایمانخراب کرسکتی ہے۔خیر پروگرامطے ہو گیا سالیکو بھی مطلع کردیاگیا۔ وہ ایکدن پہلےہی ہمارے گھر آگئی۔صبحہم کو نکلنا تھا۔جلدی جلدی ہم نےناشتہ وغیرہ کر کےسامان گاڑی میں رکھااور نکل پڑے
قانون اور بہن اردو جنسی کہانی میں دیسی سیکسی بہن
قانون اور بہن اردو جنسی کہانی میں دیسی سیکسی بہن


2 گھنٹےکی ڈرایونگ کے بعدہم لوگ اپنے ہٹپر پہنچ گئے ہٹمجھے آفس کی جانبسے ملتا تھا سال، یہ ہٹکیا تھا اچھا خاصہبنگلہ تھا۔ یہ صرفآفیسرز کی عیاشی کےلیے مخصوص تھا مگرمیں چکر چلا کرلے لیا کرتا تھا۔میری بیوی میری سالیسے بہت پیار کرتیہے اور اسکی ہربات مانتی ہے اسیوجہ سے مجھے بھیاپنی بیوی کا دلرکھنے کو جیا کیباتیں ماننا پڑتی ہیں۔خیر ہم لوگ اپنےہٹ تک پہنچ گئےوہاں کچھ ایسا ہےکہ ہر ہٹ کاکافی بڑا ایریا مخصوصہے جہاں کسی دوسرےفرد کی آمد نہیںہوسکتی۔ اسکا راستہ ایکہی ہے جس سےہم لوگ آئے تھےاب وہاں دروازے پرگارڈ بیٹھا تھا جوکسی کو بھی بغیراجازت نامے کے اندرنہیں جانے دے گا۔اس لئے کافی محفوظقسم کا ہٹ تھا۔خیر ہم لوگ وہاںپہنچے اور پہنچتے ہیسمندر میں اتر گئےسمندر بڑا پرسکون تھا۔موسم بھی بڑا رومانٹیکتھا۔ ہم لوگوں نےکافی دیر تک انجوائےکیا میرا بیٹا اسدوران مزے سے سوتارہا۔خیر اب دوپہر کےکھانے کا وقت ہوچکا تھا اور میںتو کافی تھک چکاتھا مگر جیا کوابھی مستی چڑھی تھیاسنے جینز کی پینٹاور ٹی شرٹ پہنیتھی اور وہ پانیسے نکلنے کا نامہی نہیں لے رہیتھی۔میری بیوی نے اسکو آواز دے کربلایا اور کھانا کھانےکو کہا۔ خیر ہمپھر ہم سب لوگکھانے سے فارغ ہوئےتو میری بیوی اورجیا نے دوبارہ سےپلان کیا کہ سمندرمیں جایا جائے مگرمیں نے

قانون اور بہن اردو جنسی کہانی میں دیسی سیکسی بہن
قانون اور بہن اردو جنسی کہانی میں دیسی سیکسی بہن
قانون اور بہن اردو جنسی کہانی میں دیسی سیکسی بہن

انکار کردیا۔پھر یہ لوگ چلےگئے اور میں لیٹکر آرام کرتارہا۔ میرابیٹا اسی دوران اٹھگیا میں نے اپنیبیوی کو آواز دیوہ جلدی جلدی سمندرسے باہر آئی اورمیرے بیٹے کو دیکھنےلگی۔ تھوڑی دیر بعدجیا بھی واپس آگئی۔پھر ہم لوگ باتیںکرتے رہے۔ جیا کافیتھک چکی تھی سووہ لیٹی اور لیٹتےہی سو گئی۔ میںاور میری بیوی باتیںکرتے رہے۔ کافی دیراسی طرح گذر گئیتو پھر شام ہوئیاور پھر رات بھیہوگئی اسی دوران جیاجاگ گئی اور اسنے غصے سے میریبیوی سے کہا آپیتم نے مجھے جگایاکیوں نہیں مجھے سورجغروب ہونے کا منظردیکھنا تھا۔ میری بیوینے کہا تم اتناتھک گئی تھی اسلیے نہیں جگایا۔ خیرتھوڑی دیر میں جیانارمل ہوگئی ۔ پھررات کے کھانے کاانتظام کیا گیا اورہم لوگوں نے خوبمست ہو کر کھایا۔اب مجھ پر نیندکا غلبہ طاری ہونےلگا تھا اور میریبیوی تو کھانا کھانےکے بعد اور بیٹےکو فیڈ کروانے کےبعد مزے سے سوگئی تھی میں نےجیا سے کہا تمبھی سو جاؤ اسنے کہا جی جواب کہاں نیند آئےگی اتنی دیر توسو چکی ہوں۔ میںنے کہا اکیلی کیاکروگی مجھے بھی نیندآرہی ہے۔ تمہاری آپیبھی سو چکی ہے۔اس نے کہا جیجو ابھی نہ سوئیںنا میرے ساتھ سمندرتک چلیں میں نےکہا پاگل ہوگئ ہوکیا میں بہت تھکگیا ہوں تو یہسن کر اسکا منہبن گیا۔ خیر میںنے فیصلہ کیا کےاسکی بات مان لیتاہوں۔میں نے کہا چلوچلتے ہیں باہر، یہسن کو وہ خوشہوگئی۔ میں نے اپنیبیوی سے کو جگایااور اسکو بتایا کہہم دونوں ذرا باہرچہل قدمی کرنے جارہےہیں تم چلنا چاہوگی ہمارے ساتھ تواس نے کہا نہیںمجھے بہت سخت نیندآرہی ہے آپ لوگچلے جائیں۔ یہ کہہکر وہ تو واپسسو گئی میں یہبتاتا چلو میری بیوینیند کی بہت پکیہے۔ اسکو نیند بھیجلدی آتی ہے اورسو جائے تو اسکوجگانا بہت مشکل کامہے۔ خیر جیا اور

میں ہٹ سے باہرنکلے اور سمندر کےکنارے جا کر بیٹھگئے ۔ جیا نےکہا جی جو سمندرمیں جانے کا دلکر رہا ہے میںنے کہا یہ موسمٹھیک نہیں سمندر میںجانے کے لیے مگرپھر وہ بچوں کیطرح ضدکرنے لگی میںنے ہار مانتے ہوئےکہا اچھا جو کپڑےتم نے پہنے ہوئےہیں ان میں سمندرمیں نہ اترو یہسوکھنے میں بہت وقتلینگے اور رات بھرمیں ٹھنڈ لگنے سےتم بیمار ہوسکتی ہو۔تم کپڑے دوسرے پہنکر آجاؤ۔اس نے ذرادیر سوچا اور پھرٹھیک ہے کہتی ہوئیہٹ میں چلی گئیجبکہ میں سمندر کےکنارے ہی بیٹھا رہاچاند نکلا ہوا تھااسکی چاندنی کافی دورتک سمندر کو روشنکیے ہوئے تھی اتناکہ ہر منظر کافیصاف دیکھا جا سکتاتھا۔ کچھ ہی دیرمیں جیا واپس آگئیمیں نے اسکو دیکھاتو دیکھتا ہی رہگیا وہ ایک پتلیسی ٹی شرٹ اورنیچے ٹائڈ پہنے ہوئےتھی جو کہ اسکیپنڈلیوں سے تھوڑا نیچےتک تھا۔ جبکہ ٹیشرٹ اسکی کمر تکہی تھی اسکی بڑےبڑے کولہے صاف ابلرہے تھے اس ٹائڈمیں سے۔ میں تواسکو دیکھ کر پاگلسا ہوگیا۔ میں نےکہا اب تم میراانتظار کرو میں بھیکپڑے تبدیل کر کےآتا ہوں ۔ یہکہہ کر میں بھیہٹ میں چلا گیااور جاکر میں نےایک بھی ایک ٹائڈنکالا اور ایک سینڈوزنکالا اور پہن کرجیا کے پاس پہنچگیا اور اس سےکہا چلو اب چلتےہیں اس نے مجھےاوپر سے نیچے تکدیکھا اور ایک تعریفینظر مجھ پر ڈالی۔سینڈوز بنیان کی طرحتھا کالے رنگ کاجبکہ ٹائڈ میرے گھٹنوںسے اوپر تک تھامیں نے اسکے نیچےکوئی انڈروئیر نہیں پہنا تھاجس سے میرے لنڈکی پوزیشن کسی حدتک پتہ چل رہیتھی کہ کس پوزیشنمیں ہے۔ خیر ہمدونوں آہستہ آہستہ چلتےہوئے سمند رمیں چلےگئے پانی ہم دونوںکی کمر تک آرہاتھا تھوڑی دیر ہمپانی سے کھیلتے رہےپھر میں نے جیاسے کہا چلو اورآگے چلتے ہیں اسنے کہا نہیں جیجو دل تو بہتکرتا ہے مگر ڈربھی لگتا ہے میںنے کہا میں بھیتو چل رہا ہوںتمہارے ساتھ کچھ نہیںہوگ

یہ کہہ کرمیں آگے بڑھا توجیا کو بھی مجبوراًمیرا ساتھ دینا پڑا۔پھرہم آہستہ آہستہ چلتےہوئے گہرے پانی میںپہنچ گئے سمندر بہتپرسکون تھا اس لیےگھبرانے والی کوئی باتنہیں تھی۔ وہاں پہنچکر پانی کے دباؤسے جیا کو سانسلینے میں دشواری ہورہی تھی اس نےکہا جی جو میراہاتھ پکڑ لیں مجھےڈر لگ رہا ہےمیں تو موقعے کیتلاش میں تھا فوراًاسکا ہاتھ پکڑ لیااور کافی نزدیک ہوکر کھڑا ہوگیا۔ ابوہ کافی پرسکون لگرہی تھی۔ کہ اچانکاسکا پاؤں پھسلا اوروہ گرنے لگی کہمیں نے اسکو پکڑااورگرنے سے بچا لیااسکو پکڑنے کے چکرمیں میرا ایک ہاتھتو اسکے ہاتھ میںتھ دوسرا میں نےاسکی کمر میں ڈالااوپر پھر اسکو اوپراٹھاتے اٹھاتے میں نےوہ ہاتھ جو اسکےہاتھ میں تھا اسکوچھوڑ کر اسکے ایکممے کو پکڑ لیااور اسکو دباتا ہواجیا کو ایک ہیہاتھ کے بل پرپورا اوپر اٹھایااور اپنےسینے سے لگا لیا۔وہ تھوڑی دیر توکچھ نہ سمجھ پائیپھر کہنے لگی جیجو واپس چلیں میںنے کہا تھا مجھےڈر لگتا ہے۔ میںنے کہا چلو واپسچلتے ہیں یہ کہہکر میں نے ایکہاتھ اسکی کمر میںڈالا اور ایک ہاتھسے اسکا ہاتھ پکڑلیا۔ پھر ہم چلتےہوئے واپس آرہے تھےکہ اچانک میں نےسلپ ہونے کی ایکٹنگکرتے ہوئے اسکا وہہاتھ جو میرے ہاتھمیں تھا زور سےکھینچتے ہوئے اپنے لنڈپر لگایا اور تقریباًزور سے اپنا لنڈاسکے ہاتھ سے دبادیا۔ میرا لنڈ جیاکی قربت کی وجہسے تھوڑا کروٹیں تولے ہی رہا تھا۔اسکا ہاتھ لگا تواسے بھی کرنٹ لگااور جیا کو بھیمگر اس نے خودکو سنبھالتے ہوئے کہا جیجو کیا ہو اسنبھل کے چلیں۔ میںنے کہا ہاں ایساہو جاتا ہے جببغل میں ایک خوبصورتلڑکی ہو یہ کہتےہوئے میں اسکی آنکھوںمیں دیکھ کر مسکرایا۔ تو اسنے شرما کر نظریںنیچے کر لیں۔ میرااس سے کافی مذاق

چلتا رہتا تھا۔ اسلیے اس نے شایداس بات کو بھیویسے ہی لیا ہوگا۔مگر اسکی آنکھوں کیایک دم پیدا ہوجانے والی سرخی کچھاور کہہ رہی تھی۔خیر ہم لوگ ساحلپر واپس آگئے میںنے جیا سے کہاکپڑے گیلے ہیں چلوتھوڑی دور تک چلتےہیں کپڑے سوکھ جائیںتو واپس ہٹ میںچلیں گے۔ یہ کہہکر ہم دونوں چلتےہو ئے ہٹ سےدور جانے لگے اسیدوران میں نے جیاکا ہاتھ پکڑ لیا۔اس نے چونک کرمیری جانب دیکھا اورپھر مسکرا کر سامنےدیکھنے لگی۔ میں نےاسکا ہاتھ پکڑاہوا توتھا ہی ذرا دیربعد اسکو ہلکے سےدبایا تو وہ منہنیچے کر کے مسکرانےلگی ، مجھے لگرہا تھا کہ اگرمیں مزید آگے بڑھاتو وہ روکے گینہیں مگر میں محتاطرہنا چاہتا تھا ہمدونوں خاموشی سے ساتھساتھ چل رہے تھے۔میں نے پیچھے مڑکر دیکھا تو ہملوگ ہٹ سے کافیدور آچکے تھے۔ یہاںساحل تھا دور تکاور کوئی بندہ نہبندے کی ذات دوسرےہٹ بھی کافی دورتھے جہاں سے کوئیہمیں دیکھ نہیں سکتاتھا کچھ کچھ فاصےپر بیٹھنے کے لیےسیمنٹ کی بنچز بنیہوئی تھیں۔ جن پرٹائلز لگے ہوئے تھےمیں نے جیا سےکہا چلو ادھر بیٹھتےہیں تھوڑی دیر یہکہہ کر میں اسکےجواب کا انتظار کیئےبغیر اسکو کھینچتا ہوابنچتک لے گیا۔ پھرہم دونوں بنچ پربیٹھگئے میں اسکے بلکلنزدیک چپک کر بیٹھاتھا اور اسکا ہاتھابھی تک میرے ہاتھمیں تھا۔میں نے جیاسے کہا ایک باتکہوں ؟ اس نےمیری جانب سوالیہ نظروںسے دیکھا اور کہاجی کہیں جی جو۔میں نے کہا پہلےوعدہ کرو تم برانہیں مناؤ گی۔ اسنے کہا آپ کیکسی بات کا برانہیں مناتی میں آپیہ بات اچھی طرحجانتے ہیں۔ میں نےجیا سے کہا تمبہت خوبصورت ہو جیا۔میرا دل چاہتا ہےتمکو پیار کرنے کو۔یہ سن کر اسکاچہرہ سرخ ہوگیا۔پھر میںنے ایک ہاتھ اسکے گال پر رکھکر اسکا چہرہ اپنیجانب کیا تو اسکیآنکھیں سرخ ہورہی تھیںشاید وہ آنے والےلمحات کا اندازہ کررہی تھی اسی وجہسے انکی

شدت سےاسکی یہ حالت تھی۔میں نے وقت ضائعکئے بغیر اسکے ہونٹوںپر اپنے ہونٹ رکھدیے پہلے تو وہذرا کسمسائی مگر پھرخود کو تقریباً میرےحوالے کردیا۔ میں نےایک لمبی کس کیاسکے ہونٹوں پر اورپھر اسکی جانب دیکھتاہوا اسکا ہاتھ جومیرے ہاتھ میں تھاوہ اپنے لنڈ پررکھ دیا اور ذراسا دبایا۔ جیا کوایکدم کرنٹ سا لگامگر شاید اسے اچھابھی لگا ہوگا اسیوجہ سے اس نےاپنا ہاتھ نہیں ہٹایا۔پھر میں نے محسوسکیا کہ جیا میرےلنڈ کو اپنے ہاتھمیں بند کرنے کیکوشش کر رہی ہےاوہ اب تو میریخوشی کا کوئی ٹھکانہنہ تھا میں نےجیا کے ہاتھ سےہاتھ ہٹا لیا کیونکہاب وہ ہاتھ خودکام کر رہا تھامیں نے وہ ہاتھجیا کے ایک ممےپر رکھ کر اسکوزور سے دبایا اوراسکا پورا بدن ایکدم کپکپا اٹھا۔ وہمیری جانب ہراساں نظروںسے دیکھ رہی تھی۔پھر میں نے مزیدانتظار نہ کیا جہاںاتنا کچھ ہو گیاوہاں مزید ہونا بھیمشکل نہ تھا، میںنے اسکی ٹی شرٹمیں ہاتھ ڈال دیااور بریزر پر سےہی اسکے ممے کودبانے لگا۔ اب جیاکا سانس تیز چلنےلگا تھا۔ جی جویہ کیا کر رہےہیں آپ کوئی آجائےگا میں بدنام ہوجاؤں گی ۔ میںنے کہا یہاں اسوقت کوئی نہیں آئےگا۔ اور تمہاری آپمست ہو کر سورہی ہے۔ تم بسانجوئے کرو، میری باتسن کر اس نےچاروں طرف نظریں دوڑائیںتو ہمارا ہٹ اورباقی دوسرے ہٹ کافیدور دور تھے اورپورے ساحل پر ہمدونوں کے سوا کوئیتھا بھی نہیں۔ اسکےچہرے پر اب سکونکے آثار آگئے تھےمیں سمجھ گیا کہاب اسکو کوئی فکرنہیں ہے لہٰذا میںجو چاہے کر سکتاہوں۔ میں نے دونوںہاتھوں سے اسکی ٹیشرٹ کو اوپر اٹھایاتو اس نے مزاحمتکی مگر میں نےاسکی جانب دیکھا تواسکی آنکھوں میں عجیبطرح کی مستی سیتھی۔ میں نے دوبارہکوشش کی اور اسکیٹی شرٹ کو اتا

ردیا اس بار اسنے کوئی مزاحمت نہیںکی۔ کالے رنگ کےبریزر میں جکڑے ہوئےاسکے گورے گورے بڑےبڑے ممے میرا دماغابال رہے تھے۔ میںنے اسکو اپنے سینےسے لگایا اور پیچھےہاتھ لے جا کراسکے بریزر کے ہککھول کر اسکے خوبصورتمموں کو بریزر کیقید سے آزاد کردیا اس نے شرماکر دونوں ہاتھوں سےاپنے ممے چھپا لیےمیں نے مسکرا کراسکی جانب دیکھااور کھڑاہو کر اپنا سینڈوزاور ٹائڈ ایک ہیلمحے میں اتار دیا۔وہ مجھے پور ننگادیکھ کر عجیب سےہوگئی میرا لنڈ اسکےممے دیکھ کر پوراتن کر اپنے فلسائز میں آچکا تھا۔وہ اسے دیکھ کرحیران ہو رہی تھی۔اور پھٹی پھٹی نظروںسے دیکھ رہی تھی۔اب میں اسکے نزدیکبیٹھا اور اس سےکہا کھڑی ہو جاؤوہ سوچتے سوچتے کھڑیہوئی تو میں نےدونوں ہاتھوں سے اسکاٹائڈ اسکے گھٹنوں تککھینچ کر اتار دیااباسکی کنواری چوت میرینظروں کے سامنے تھی۔میں نے اسکی چوتپر ایک کس کیاتو وہ ایک بارپھر سے کپکپا اٹھی۔اور میں نے دیکھاکہ اس نے باقیٹائڈ خود ہی میرےکہے بغیر اتار دیاتھا شاید وہ بھیاب یہ چانس ضائعنہیں کرنا چاہتی تھی۔پھر میں نے اسکوبینچ پرلٹا دیا اوراسکے ممے چوسنے لگاوہ پاگل سی ہورہی تھی اور اسکے منہ سے آہیںنکل رہی تھیں اسکابدن گرم ہونے لگاتھا۔ خود میرا بھیحال کچھ اس سےمختلف نہیں تھا بسفرق اتنا تھا کہاسکا پہلا موقع تھااور میں کئی باراپنی بیوی سے یہسب کر چکا تھا۔پھر میں نے مزیدآگے بڑھنے کا سوچااور اسکی چوت پرانگلی رکھی تو پہلےسے گیلی ہو چکیتھی بس اب کیاتھا میں نے اپنالنڈ اس کی چوتکے منہ پر رکھا۔اور اسکو دبایا تومیرے لنڈ کا ہیڈاسکی چوت میں چلاگیا وہ تکلیف سےاچھلنے لگی ۔ جیجو بہت تکلیف ہورہی ہے پلیز یہسب نہ کریں میںنے کہا ابھی تکلیفختم ہو جائے گیبس پھر مزے کرنا۔یہ کہتے ہوئے میںنے اپنا لنڈ واپسباہر نکالا صرف اتناکے وہ اسکی چوتسے الگ نہ ہواسکے بعد دوباہ پہلےسے زیادہ طاقت کےساتھ میں نے اسےاندر ڈالا اوروہ اسکیچوت کو پھاڑتا ہوکافی اندر تک چلاگیا اب وہ دردسے کراہ رہی تھیچیخ اس لیے نہیںرہی تھی کہ اسکوابھی بھی ڈر تھاکہ کوئی اسکی آوازسن کر آ نہجائے۔ پھر میں نےایک بار پھر وہہی عمل کیا اورلنڈ کو تھوڑا باہرنکال کر پھر پہلےسے زیادہ طاقت کے

ساتھ اندر گھسیڑا میراپورا لنڈ اس کیچوت میں داخل ہوچکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اوہ۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا بتاؤں اسکیچوت کتنی ٹائٹ اورکتنی گرم تھی۔ مزےکے ساتوں آسمان پرپہنچ گیا تھا میںمیرا دل کر رہاتھا اسی طرح زندگیختم ہو جائے میرالنڈاسکی چوت میں ہیرہے۔ پھر میں نےتھوڑا لنڈ باہر نکالااور پھر اندر کیااور یہ عمل باربار کرتا رہا اسکیتکلیف کافی حد تککم ہو چکی تھیاور وہ تیز سانسوںکو کنٹرول کرنے کیکوشش کر رہی تھی۔میںنے پورا لنڈ اسکیچوت میں ڈال کراسکے اوپر لیٹ گیااب وہ بھی میراساتھ دے رہی تھیاس نے مجھے اپنیبانہوں میں جکڑ لیاتھا میں سمجھ گیااب وہ بالکل تیارہے چدنے کے لیےمیں نے اپنا کامشروع کردیا اور تیزتیز لنڈ کو اندرباہر کرنے لگا ۔ایک تو سمندر، دوسرےچاندنی رات اور پھرجیا جیسے خوبصورت لڑکیمیرا تو دماغ جنتکی سیر کر رہاتھا۔ میں نے بھیزیادہ سے زیادہ وقتکھینچنے کے لیے کوششکی اور تقریباً دسمنٹ تک اسکی زبردستچدائی کی اس دورانوہ دو بار فارغہوچکی تھی اور ہربار زور دار آہیںبھرنے کے بعد کہتیتھی جی جو بسکرو اب میں تھکگئی مگر میرا لنڈتو جیسے دیوانہ ہوگیاتھا وہ کہاں رکنےوالا تھا جب تکاسکا لاوا نہ نکلجاتا۔ خیر پھر میںنے بھی فارغ ہونےکا فیصلہ کر لیااور لنڈ کو تیزتیز اندر باہر کرتارہا۔ اور آخر کارزبردست جھٹکوں کے ساتھمیرا لنڈ اسکی چوتکو اپنے لاوے سےبھرنے لگا۔ اب کیبار اسکا پورا بدنایسے کپکپا رہا تھاجیسے کسی مشین پرلیٹی ہو۔ خیر میںتھوڑی دیر اسکے اوپرہی لیٹا رہا اوراسکے بدن کو چومتارہا۔ پھر ہم دونوںاٹھے اور کپڑے پہنکر واپس سمندر میںچلے گئے تاکہ خودکو صاف کرسکیں وہاںبھی میں نے اسکوخوب مساج کیا اوراسکی چوت میں انگلیڈالی۔ پھر ہم واپسہٹ میں آگئے اورسو گئے اسکے بعدبھی کئی بار میںنے اسکو چودا جبجب موقع ملا وہبھی میرے لنڈ کیدیوانی ہو چکی تھی۔... قانون اور بہن اردو جنسی کہانی میں دیسی سیکسی بہن

No comments:

Post a Comment

Facebook Comment

Blogger Tips and TricksLatest Tips And TricksBlogger Tricks